Monday, 20 May 2013

روٹھا تو شہرخواب کو غارت بھی کرگیا

Mohsin Naqvi Sad poetry. 
Rota thu shehri khwb ko Gharat be kar gia.
peer muskara ke taza sharart be kar gia. 
Urdu poety by Mohsin Naqvi. 


روٹھا تو شہر خواب کو غارت بھی کرگیا
پھر مسکرا کے تازہ شرارت بھی کرگیا

شاءید اسے عزیز تھیں انکھیں مری بہت 
وہ میرے نام اپنی بصارت بھی کرگیا

منہ زور اندھیوں کی ہتھیلی پہ ایک چراغ
پیدا میرے لہومیں حرارت بھی کرگیا

دل کا نگر اجھاڑنے والا ہنر شناس
تعمیر حوصلو ں کی عمارت بھی کرگیا

سب اہل شہرجس پہ اٹھاتے ہیں انگلیاں
وہ شہر بھر کو وجہ زیارت بھی کرگیا
محسن یہ دل کہ اس سے بچھڑنانہ تھا کبھی
اج اس کو بھولنے کی جسارت بھی کرگیا

No comments:

Post a Comment