Tuesday, 8 September 2015

گل مرجان ئی منی او کنہ۔

کابل دہ کابلیانو مبارک شہ۔۔
سوک چی وائی چی خیبیر پختونخواہ دہ افغانستان حصہ دہ نو دا رومانوی خوبونہ لیدل دی نور پریدی اور نوی نسل تہ دی دا بے مقصدہ خوبونو خودلو پہ زائے دہ خپل ھیواد سرہ دہ مینے درس ورکڑی۔
افغانانو او افغانستان تہ احترام لرم خو زما وطن، مینہ ، شہرت، شہریت ، ژوند او راتلونکے پاکستان دے افغانستان نہ۔۔
دہ خپل سیاسی دکاندارئی دہ پارہ خدائے تہ اوگورئی کہ مذہب کارول جرم دے نو دہ پختون قامیت او صوبائیت جھنڈے پورتہ کوول ھم بیا جرم او لویہ غداری دہ چی جیب کی شنہ کارڈونہ گرزوو، وزارتونہ اخلو، اسلام اباد کی ابادئی اور روزگارونہ لرو خو دہ بل بچی تہ دہ کلہ دہ لوئی افغانستان او کلہ دہ ستر پختونستان رومانوی او بے مقصدہ نعرے او شعارونہ خایو چی سیاسی دکان مو اباد وی۔
زما یقین دے نوے نسل بہ نور ددی نعرو پہ چکر کی نہ رازی۔ بے شکہ دہ ھر چا حق دے چی دہ کومے سیاسی ڈلے سرہ تعلق ساتی خو پاکستان او پاکستانیت ئی اول ٹکے دے۔۔
تاسو سہ نظر لرئی۔۔۔
دا زما رائے دہ نہ چی دہ چا سپکہ او دہ بل درنہ ۔۔۔ نو ھیلہ لرم چی سوک ورسرہ اتفاق نہ لری نو راتہ دی ووائئ او ثابتہ کڑی چی ولے او سنگہ بہ زمونگ ژوند کابل/افغانستا ن کی شتہ او خہ شی۔۔
لیک۔۔
سمیع اللہ خآطر
RJ Samiullah khatir
 

No comments:

Post a Comment