بدھ، 23 اپریل، 2014

Hamid Mir chanted Pakistan Zindaabad when he was shot. Says Aamir Liqat Hussain

Geo TV anchor and self claimed religious scholar Aamir Liaaqat Hussain claimed that Hamid Mir chanted slogan of Pakistan Zinda Abad and recited the Kalma Tayeba  when he was shot by unidentified gunmen in Karachi last week.
Amir Liaqat Hussain  after meeting with Hamid Mir,  told in a TV program that Hamid Mir when came to had conscious back he asked his wife to bring the film of the incident and newspapers to read.




 الفاظ کے ہیر پپھر کے ماہر   جیو نیٹ ورک کے مذہبی سکالر ڈاکٹر عامر لیاقت حسین نے کہا ہے کہ جیو کے سینئر اینکر حامد میر نے گولیاں لگنے کے بعدکلمہ کا ورد اور پاکستان زندہ باد کے نعرے لگائے ، ہوش میں آنے کے بعد انہوں نے سب سے پہلے اہلیہ سے فلم اور اخبار طلب کیا ۔اپنے پروگرام میں عامر لیاقت حسین نے گزشتہ روز حامد کی عیادت کے بعد ان سے ہونے والی گفتگو کے بعض مندرجات بیان کیے جس کے مطابق حامد میر نے گولیاں لگنے کے بعد کلمہ طیبہ کا ورد کیا، نعرہ تکبیر بلند کیا اور مسلسل ”پاکستان زندہ باد“ کے نعرے بلند کئے جو ان کی حب الوطنی کا واضح ثبوت ہے، اپنی پہلی گفتگو میں حامد میر نے خود پر ہونے والے حملے کے حوالے سے انہوں نے کسی ادارے کو نامزد نہیں کیا اور واشگاف انداز میں کہا ہے کہ وہ حملہ آوروں کو نہیں جانتے، وہ انشاءاللہ جلد ہی ٹی وی سکرین پر نمودار ہوں گے اور اس حوالے سے ناظرین کو حقائق سے آگاہ کریں گے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ عامر لیاقت کو یہ باتیں واقعہ کے تین روز بعد یاد آئی ہیں
Thanks for Visiting Pashto Time, the most visited and viewed Pashto Website for Pashto Poetry. 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Thanks for visiting Pashto Times. Hope you visit us again and share the article you on social media with your kind and respected friends. We Pashto Times present the best of contents about Pashto History, Pashto Poetry, Pashto Literature, Pashto Books, Pashto watan, Pashto Personalities, Pashto politics, history of the region, biographies of well known and noted Iconic persons around the world. Pashto Times or Khatirnama surely tries to translate world most read and viewed article to Pashto or Pukhto language so our Pashto speakers friends can read it easily.